Sun, Feb 28, 2021

*سماجی خدمت کے ساتھ دینی مدارس کا تعاون کرنے لجنۃالعلماء تلنگانہ وآندھراکی اپیل*

خیروبرکت کے تمام طلبگارو۔۔السلام علیکم ورحمۃاللہ وبرکاتہ،دنیا ومافیھاکاقیام وبقاء اللہ کےنام کی برکت سےہے،جبتک اللہ کانام لیاجاتارہیگااوراسکےآگےجبین نیازخم ہوتی رہےگی تب تک کارخانہ عالم کام کرتارہےگااورجب یہ عمل ختم ہوگاتوگویاروح کائنات سلب کرلیجاےگی۔۔
کائنات ارضی وسماوی کی بقاءکاسامان فراہم کرنے والےکارخانوں کانام دینی مدارس ہے۔۔موجودہ عالمی بلاءووباءکےتناظر میں ہرچھوٹی بڑی تنظیمیں ہی کیااپنےاپنےعلاقہ کاہرطالب خیربھوکوں پیاسوں محتاجوں کی خبر گیری کررہاہے یہ غیرمعمولی جذبہ سخاوت ہےاللہ قبول فرماکردنیوی برکتوں اوراخروی درجات کاذریعہ بنادے۔مدارس دینیہ کابقاءبھی فضل الھی کےبعددین پسند،علم دوست معاونین کےتعاون سےباقی ہے،بالخصوص رمضان کے موقع پرہونےوالےعطیات وصدقات زکوۃوفطرات وغیرہ دینی مدارس کی ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتےہیں،کہیں ایسانہ ہوکہ ہم نےعارضی تقاضوں کوترجیح دیتےہوےمستقل اورہمیشہ کی ضرورت یعنی مدارس اوراسکےتقاضوں کوپس پشت ڈالدیاہو،اسلۓ تمام مسلمان بھائیوں بہنوں عوام وخواص سےخصوصی گذارش ہیکہ اپنے اموال وغلہ جات وغیرہ کاسالانہ تعاون حسب سابق مدارس کو ضرورعنایت فرمائیں تاکہ مہمانان رسول ص یعنی طلبہ وطالبات اورانکونکھارنے وسنوارنے والےاساتذہ کرام کی خدمات کانظام چلتارہےبہ ایں واسطہ قرآن وحدیث پڑھنے والے،ذکروفکرکرنے والےباقی رہکردنیا ومافیھاکےبقاء کاسامان کریںگے،اس سال زکوۃ کےعلاوہ مدارس دینیہ غالباخواتین کے مھرکےکچھ حصہ ،اورانکےقیمتی کپڑےبنانےکیلۓ رکھےگۓپیسوں کےکچھ حصہ کےبھی ضرورت مند ہوںگے،امیدکہ مردوں کیطرح خواتین اسلام کابھی بڑاتعاون اس سال مدارس کو حاصل رہےگا۔۔۔
عوام مطلع ہوںکہ ایسے کٹھن حالات میں اپنی محدود تنخواہوں کےباوجود مولوی طبقہ معاونین میں شامل ہےنیزمزید کم تنخواہوں پر بھی دین کی خدمات کےمواقع جانے نہیں دیگاانکی یہ سخاوت وقربانیاں مالداروں سے سوال کر رہی ہیں کہ کیاآپ بھی اعلی ظرف سخی نہیں ہوسکتے؟
ہردین کی فکر رکھنےوالے کےدل سے یہی آوازآےگی کیوں نہیں،ہماری جان اورہمارامال سب اللہ کیلۓ ہے۔۔۔