Tue, Mar 2, 2021

ضلع کاماریڈی میں اوقافی جائیداد کا تحفظ ناگزیر
جمعیۃ علماء ہند ضلع کاماریڈی کی جانب سے تحفظ اوقاف کیلئے ۵ رکنی کمیٹی کی تشکیل۔ الحاج سید عظمت علی  کنوینر منتخب۔


مساجد قبرستان، درگاہیں اور مدارس دینیہ کے لئے وقف کی گئی جائداد کا تحفظ انتہائی ضروری ہے، جمعیۃ علماء ہند ضلع کاماریڈی کے ضلعی اجلاس میں ضلع کاماریڈی کے مختلف مقامات سے شکایات موصول ہوئی کہ قبرستان ومساجد و دیگر اوقافی اراضیات پر قبضے کئے جارہے ہیں، حالات کا جائزہ لینے پر پتہ چلا کہ تقریباً مقامات پر حد بندی نہیں ہے، اور وقف بورڈ کی جانب سے بورڈ آویزاں نہیں کیا گیاہے، جس کی وجہ سے قبرستان کی بے حرمتی ہورہی ہے، اور تحفظ نہیں ہورہا ہے، مفتی مولانا محمود زبیر صاحب قاسمی جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ہند تلنگانہ وآندھراپردیش نے کہا کہ وقف کی اراضیات کا تحفظ کیا جائے، وقف بورڈ میں اندراج کروایا جائے، عہدیداروں کو متوجہ کیا جائے، وقف کردہ اراضیات کا مالک اللہ تعالی کی ذات ہے، کسی کو منشاء وقف کے خلاف استعمال یا فروخت کرنے کی اجازت نہیں ہے، اس کی حفاظت ہماری ذمہ داری ہے، حافظ فہیم الدین منیری، الحاج سید عظمت علی نے اجلاس میں تفصیلات سے آگاہ کیا، اور کہا کہ تاڑوائی منڈل کے ایرہ پہاڑ گاؤں میں قبرستان کی اراضی پر دوسرے لوگ ناگر کشی کررہے ہیں، اسی طرح تاڑوائی مستقر پر قبرستان کی زمین کی حد بندی کرنے سے روکا جارہا ہے، اور قبرستان کی زمین کو تمام طبقات میں تقسیم کے لئے دباؤ ڈالا جارہا ہے، حالانکہ اس سے قبل ضلع کلکٹر صاحب سے نمائندگی کی گئی، مگر مقامی مسلمانوں پر دباؤ ڈالا جارہا ہے، کاماریڈی سے ۵ کلو میٹر کی دوری پر واقع موضع گرگل میں مسلمانوں کے دو قبرستان ہیں، جناب غلام رسول صاحب مرحوم کئی مرتبہ کوشش کئے کہ سروے کروا کر قبرستان کی حد بندی کی جائے، لیکن نہیں ہوسکی، دوسرا قبرستان سنگتراش کا ہے، اس کو محدود کردیا گیا ہے، اسی طرح بی بی پیٹ منڈل موضع تجالپور کے قبرستان سے روڈ نکال کر قبروں کی بے حرمتی کی گئی، اسی طرح فرید پیٹ اور بھکنور وغیرہ کے قبرستان اور دیگر مقامات کی شکایات موصول ہوئی ہیں، کاماریڈی سرسلہ روڑ پر مسجد کے لئے وقف کی گئی قیمتی اراضی کو فروخت کردیا گیا، نیز ضلع میدک کے منڈل نظام پیٹ کے موضع نندا گوگل کے قبرستان سے راستہ نکالنے پر اور کوڑا پھینکنے کے لئے جگہ دینے کے لئے دباؤ ڈالا جارہا ہے، جس پر جمعیۃ علماء کی جانب سے جناب محمد فصیح الدین صاحب میدک کی رہبری میں مقامی احباب کے ساتھ ضلع کلکٹر میدک سے ملاقات کرکے یاداشت پیش کی گئی، بعض مقامات کی قدیم مساجد کی تعمیر اور آبادی کے سلسلہ میں توجہ دلائی گئی، جمعیۃ علماء ہند ضلع کاماریڈی کے زیراہتمام تحفظ اوقاف کے سلسلہ میں فی الحال پانچ رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی، جس کے کنوینر الحاج سید عظمت علی صاحب جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ہند ضلع کاماریڈیجبکہ جناب جاوید علی صاحب، حافظ محمد یوسف حلیمی انور صاحب، مقصود احمد خان صاحب ایڈوکیٹ، اور محمد فیروز الدین کو اراکین منتخب کیا گیا؛ ضلع کاماریڈی کے تمام منڈل سے قوم وملت کا درد اور جذبہ رکھنے والے احباب کو مزید کمیٹی میں شامل کرکے منظم انداز میں جمعیۃ علماء ہند کاماریڈی کے زیرنگرانی تحفظ اوقاف کا کام کیا جائے گا، منڈل کے افراد سے رابطہ کرکے ریکارڈ حاصل کیا جائیگا، ضلع کلکٹر صاحب ودیگر متعلقہ عہدیداران و قائدین سے ملکیت اوقاف میں حفاظت کے لئے نمائندگی کی جائیگی انشاء اللہ۔ عامۃالمسلمین سے آبادی مساجد کی فکر، باؤنڈری وال کی تنصیب، قبرستانوں کی حصار بندی، وقف بورڈ کی جانب سے لگائے جانے والے بورڑ کو آویزاں کرنے کی اپیل کی جاتی ہے۔ تفصیلات کے لئے رابطہ کریں۔ 9618156786