Wed, Feb 24, 2021
فرقہ پرستی کو روکنے کے لئے ضرور اپنے ووٹ کا استعمال کریں
مولانا خالد سیف اللہ رحمانی کا صحافتی بیان
————————–
راست /یکم دسمبر کو ہمارے شہر کا کارپوریشن الیکشن ہے، جمہوریت کو باقی رکھنے میں الیکشن کا بنیادی کردار ہوتا ہے، الیکشن کے ذریعہ عوام کو مخلص، عوام دوست، انصاف پسند قائدین کے منتخب کرنے کا موقع ملتا ہے؛ اس لئے ووٹ کی بڑی اہمیت ہے، اس پس منظر میں تمام اہل شہر اور بالخصوص مسلمانوں سے اپیل کی جاتی ہے کہ وہ ضرور اپنے حق رائے دہی کا استعمال کریں اور پوری دانشمندی سے کام لیتے ہوئے ایسے امیدواوں کو ووٹ دیں، جو بی جے پی جیسی فرقہ پرست جماعت کو اقتدار سے دور رکھ سکے، یہ بات بہت ہی قابل توجہ ہے کہ حیدرآباد کی بچی کھچی مسلم شناخت فرقہ پرستوں کی نظر میں کھٹک رہی ہے؛ اس لئے انھوں نے کارپوریشن کا الیکشن جیتنے کے لئے اپنی پوری طاقت جھونک دی ہے، اور معمول کے خلاف مقامی سطح کے اس الیکشن میں وزیر اعظم، وزیر داخلہ، ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ اور پارٹی ہائی کمان خود میدان میں اتر آئے ہیں، اس کا مقصد گنگا جمنی تہذیب اور ہندو مسلم یگانگت کے حامل اس تاریخی شہر میں فرقہ پرستانہ ایجنڈے کو آگے بڑھانا ہے؛ اس لئے تمام حضرات تین باتوں کا اہتمام کریں، اول یہ کہ ووٹ ضرور دیں، دوسرے: صبح کی اولین ساعتوں میں ووٹ دینے کی کوشش کریں، تیسرے: اپنے ووٹ کا استعمال اس طرح کریں کہ فرقہ پرست طاقتوں کو آگے بڑھنے کا موقع نہ ملے، اپنے ووٹ کو تقسیم ہونے سے بچائیں اور کمزور امیدواروں کو ووٹ دے کر اپنے ووٹ کو ضائع نہیں کریں۔
۲۸؍ نومبر: ۲۰۲۰خالد سیف اللہ رحمانی